دل کا امیر

آج ہلکی سی بارش تھی جس کی وجہ سے سردی کی شدت زیادہ تھی۔میں سودا لینے کے لیے ایک مارٹ میں چلاگیا۔اچانک میری نظر ایک آدمی پر پڑھی جو درمیانے عمر کا تھا وہ جب مارٹ میں داخل ہوا تو اس کے ساتھ ایک کھچرا چننے والا(کباڑی) بچہ بھی تھا۔یہ شخص اپنے بچوں کے لیے کچھ سامان خریدنے آیا تھا راستے میں اس بچے پر نظر پڑی جو اتنی سردی میں بھی بغیر سوٸٹر پہنے اپنے لیے روزی روٹی کی تلاش میں تھا تو وہ اس بچے کو بھی ساتھ مارٹ لے آیا۔

اس شخص نے ایک اچھا سا سویٹر لے کر اس بچے کو پہنادیا اور کیشٸر کو بل ادا کردیا۔جب وہ بچہ وہاں سے جانے لگا تو اس شخص نے اسے بلا کر پانچ سو کا نوٹ اس بچے کے جیب میں ڈال دیا اور دعا کا بول کر اس بچے کو رخصت کردیا۔

یہ شخص پیسے کے لحاظ سے امیر تھا یا نہیں یہ تو میں نہیں جانتا ہاں البتہ اتنا جانتا ہوں کے وہ دل کا بہت امیر تھا۔“

اللہﷻ ہم سب کو نیکی کرنے کی توفیق عطا فرماۓ (آمین)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *