دﻭﺳﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﻠﮯ ﮔﯽ

ﺍیک عالم فرماتے ہیں ﻣﯿﮟ ﮔﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﺗﻬﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﻬﺎ کہ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﻬﻼ ماں اپنے بچے کو مار رہی ہے اور تھپڑ لگا رہی ہے،اور کہہ رہی ہے کہ تو نے بڑا ﺫﻟﯿﻞ ﮐﯿﺎ ﺑﮍﺍ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ کیا، تو کوئ بات نہیں مانتا ہے، اور نافرمان ہے، نکل جا میرے گھر سے۔ ﻭﮦ ﺑﭽﮧ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﺗﻬﺎ، دﻫﮑﮯ ﮐﻬﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﻬﺎ،ﺟﺐ ﮔﻬﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ نکلا ماں نے کنڈی لگا لی۔

ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﻬﮍﺍ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺫﺭﺍ ﻣﻨﻈﺮ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﻬﻮﮞ۔ ﺑﭽﮧ روتے روتے ایک طرف کو چل پڑا ذرا آگے گیا ،رک کر پھر واپس آ گیا. ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﻬﺎ ﺑﭽﮯ ﺗﻢ ﻭﺍﭘﺲ ﮐﯿﻮﮞ ﺁ ﮔﺌﮯ. ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ، کہیں اور چلا جاوں پھر خیال آیا کہ مجھے دنیا کی ہر چیز مل سکتی ہے،،پر مجھے ماں کی محبت نہیں مل سکتی،اس لئے واپس آ گیا ہوں۔ محبت ملے گی اسی در سے ملے گی۔

ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﭽﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻭﮨﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ.ﻣﯿﮟ ﺑﻬﯽ ﻭﮨﯿﮟ بیٹھ گیا۔ بچے کو نیند آگئ اس نے اسی دہلیز پر سر رکھا سو گیا. کچھ ﺩﯾﺮ ﮔﺰﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺩﺭﻭاﺯﮦ کھولا۔ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ،دہلیز پر سر رکھے سو رہا ہے،ماں نے ﺍﭨﻬﺎﯾﺎ…….ﮐﯿﻮﮞ ﺩﮨﻠﯿﺰ ﭘﺮ ﺳﺮ رکھے سو رہے ہو؟؟ بولا،ﺍﻣﯽ ﻣﺠﻬﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ کبھی ﻣﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻞ ﺳﮑﺘﯽ. ﻣﯿﮟ اس دہلیز کو چھوڑ کر کیسے جاوں؟

ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺑﭽﮯ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ آ گئے،بچے کو سینے سے لگا لیا،اور بولی میرے بیٹے ﺟﺐ ﺗﯿﺮﺍ یقین ہے کہ اس گھر کے سوا تیرا کوئ گھر نہیں،پھر کیوں ستاتا ہے، کہنا نہیں مانتا….میرا در کھلا ہے،آجا میں نے تیری غلطیوں کو معاف کر دیا.
ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ……..

ﺟﺐ ﮔﻨﺎﮨﮕﺎﺭ ﺑﻨﺪﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ.
ﺭﺏ ﮐﺮﯾﻢ ﻣﯿﺮﯼ ﺧﻄﺎﻭﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ.
ﻣﯿﺮﮮ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ.
ﺍﮮ ﺑﮯ ﮐﺴﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺳﺘﮕﯿﺮ.
ﺍﮮ ﭨﻮﭨﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﻮﺗﺴﻠﯽ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ.
ﺍﮮ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﺨﺸﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺫﺍﺕ.
ﺍﮮ ﺑﮯ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﺑﻨﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺫﺍﺕ.
ﺍﮮ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﮐﮯ ﭘﺮﺩﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﻬﭙﺎ ﻟﯿﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽذات،
ﺗﻮ ﻣﺠﻪ ﭘﺮ ﺭﺣﻢ ﻓﺮﻣﺎ ﺩﮮ،
ﻣﺠﻬﮯ ﺩﺭ ﺩﺭ ﺩﻫﮑﮯ ﮐﻬﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﭽﺎ ﻟﮯ،
ﺍﻟﻠﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﺎﺭﺍﺿﮕﯽ ﺳﮯ ﺑﭽﺎ ﻟﮯ،
ﭘﺮﻭﺭﺩﮔﺎﺭ ﺁﺋﻨﺪﮦ ﻧﯿﮑﻮﮐﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻋﻄﺎﻓﺮﻣﺎ،
ﺟﺐ ﺑﻨﺪﮦ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﭘﯿﺶ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ، تو پھر اللہ تعالیﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﯽ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ. ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﻲ ﮨﻤﯿﮟ ﺳﭽﯽ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﻮﻓﯿﻖ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎﺋﮯ۔ ﺁﻣﯿﻦ ﯾﺎﺭﺏ ﺍﻟﻌﺎﻟﻤﯿﻦ۔“

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *